24 نومبر 2022ء

پی ٹی اے کے زیر اہتمام جی ایس ایم اے موبائل کنیکٹوٹی انڈیکس کے موضوع پر ورکشاپ

اسلام آباد(24 نومبر2022ء) پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (پی ٹی اے) نے گلوبل سسٹم فار موبائل کمیونی کیشنز (جی ایس ایم اے) کے تعاون سے جی ایس ایم اے موبائل کنیکٹوٹی انڈیکس (ایم سی آئی) پر پی ٹی اے ہیڈ کوارٹرز میں ایک ورکشاپ منعقد کی ۔
ورکشاپ میں ایم سی آئی پر روشنی ڈالی گئی جس کا مقصد پاکستان میں مستقبل کے ایم سی آئی اسکورز میں بہتری لانے کے ساتھ اس بات کا بھی جائزہ لینا تھا کہ انڈیکیٹر کی تشخیص کس طرح کی جا سکتی ہے اور کس طرح پی ٹی اے اور دیگر اسٹیک ہولڈرز ڈیٹا جمع اور جی ایس ایم اے کے ساتھ شیئر کرسکتے ہیں۔
ورکشاپ میں وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی اینڈ ٹیلی کام (ایم او آئی ٹی اینڈ ٹی)، پاکستان بیورو آف سٹیٹسٹکس (پی بی ایس)، فریکوئنسی ایلوکیشن بورڈ (ایف اے بی)، یونیورل سروس فنڈ (یو ایس ایف)، نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی (نیپرا)، وزارت وفاقی تعلیم و پیشہ ورانہ تربیت (ایم او ایف ای پی ٹی) اور موبائل آپریٹر وں کے نمائندوں اور پی ٹی اے کے سینئر افسران نے بھی شرکت کی۔ 
ممبر کمپلائنس اینڈ انفورسمنٹ ڈاکٹر خاور صدیق کھوکھر نے اپنے افتتاحی کلمات کے دوران کہا کہ پی ٹی اے نے ہمیشہ ملک بھر میں سستی اور جدید خدمات اور ٹیکنالوجیز کی فراہمی کے لئے کوششیں کی ہیں۔ یہ ٹیلی کام ڈیٹا کی فراہمی اور تصدیق کے معاملے میں ایم سی آئی پر جی ایس ایم اے کے ساتھ مل کر کام کر رہا ہے۔ 
 دوران ورکشاپ جی ایس ایم اے کے مقررین کی جانب سے سماجی تعمیر میں رابطوں کے کردار اور ایم سی آئی کے استعمال کے حوالے سے رہنما خطوط پر روشنی ڈالی گئی جبکہ بعد ازاں شرکا کے ساتھ ایک انٹر ایکٹو سیشن کے ذریعے اس پر مزید تبادلہ خیال بھی کیا گیا۔
اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے چیئرمین پی ٹی اے میجر جنرل (ریٹائرڈ) عامر عظیم باجوہ نے کہا کہ پاکستان کا مجموعی ایم سی آئی اسکورسال 2019 میں39.8 سے بڑھ کر سال 2021 میں 43.9 ہو گیا ۔ پاکستان میں سال 2019 اور 2021 کے درمیان ایم سی آئی کی چاروں کیٹیگریز یعنی انفراسٹرکچر، رسائی ،صارفین کا رجحان ، اور مواد میں بہتری دیکھی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ورکشاپ میں اسٹیک ہولڈرز کی جانب سے بھرپور شرکت اس بات کی عکاسی کرتی ہے کہ ایم سی آئی میں تشخیص کردہ متعلقہ مسائل مستقبل میں موثر انداز میں حل کیے جاسکیں گے۔ چیئرمین نے ورکشاپ کے انعقاد اور متعلقہ شعبوں میں استعداد کار کے فروغ میں معاونت پر جی ایس ایم اے کا بھی شکریہ ادا کیا۔ 
 
 
خرم علی مہران 
ڈائریکٹر تعلقات عامہ